غلط اور زائد بلنگ کے خلاف کارروائی کا صائب فیصلہ


کراچی کے شہریوں سے ہی زائد بلنگ کی مد میں 200 ارب لوٹے گئے ہیں۔ فوٹو: فائل

کراچی کے شہریوں سے ہی زائد بلنگ کی مد میں 200 ارب لوٹے گئے ہیں۔ فوٹو: فائل

بجلی محکمے کی زیادتیوں اور غلط و زائد بلنگ کے ڈسے ہوئے عوام کے لیے یہ خبر خوش آیند ہے کہ منگل کو نیپرا ایکٹ ترمیم میں غلط بلنگ، اوور بلنگ کے مرتکب محکمے کے اہلکاروں کے خلاف کارروائی کرنے کی شق قومی اسمبلی کی کمیٹی سے منظور کروائی گئی ہے۔ نئی شق کے تحت اب وہ اہلکار جو اوور بلنگ اور غلط بلنگ میں ملوث ہوں گے ان کو 3 سال تک قید کی سزا دی جاسکے گی۔ بلاشبہ مذکورہ شق کی منظوری قابل تحسین اقدام ہے کیونکہ پاکستان کے شہری ایک عرصہ سے غلط اور زائد بلنگ کا غیر منصفانہ بوجھ بھگت رہے ہیں۔ شنید ہے کہ صرف کراچی کے شہریوں سے ہی زائد بلنگ کی مد میں 200 ارب لوٹے گئے ہیں، جس کا کوئی حساب نہیں۔ ظلم کی انتہا تو یہ ہوئی کہ جب صارفین غلط اور زائد بلنگ کی شکایات لے کر بجلی محکمہ پہنچتے تو انھیں نہ صرف ناروا سلوک جھیلنا پڑتا بلکہ عملہ معاملہ سلجھانے کے بجائے ترش روی سے زائد بلنگ کی ادائیگی پر مجبور کرتا۔ ایسی بھی خبریں میڈیا کے ذریعے رپورٹ ہوئیں کہ 80، 60 گز کے مکانات پر لاکھوں روپے کا ماہانہ بل بھیج دیا گیا، اور غریب صارفین اس ذہنی دباؤ کا بوجھ برداشت نہ کرپانے پر دارِ فانی سے کوچ کرگئے، محکمہ کے ناروا اقدام کے خلاف خودسوزی کے کئی واقعات بھی پیش آئے لیکن اعلیٰ سطح پر کوئی شنوائی نہ ہوسکی۔

اب سننے میں آیا ہے کہ نئی شق کے مطابق نیپرا ہی اوور بلنگ اور غلط بلنگ کی شکایات کو دیکھے گا اور ثابت ہونے پر متعلقہ اہلکاروں کے خلاف کارروائی ہوگی۔ اس فیصلے کے بعد کم از کم صارفین کو اس غیر انسانی رویے کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا جو ماضی میں بجلی محکمہ کی بدنامی کا باعث بنا ہوا تھا۔ یہ امر بھی قابل توجہ ہے کہ نچلے درجے کے ملازمین، میٹر ریڈرز اور محکمہ جاتی عملہ اپنی ذاتی حیثیت میں اتنے بڑی کرپشن کا مرتکب نہیں ہوسکتا، یقیناً اس کے پیچھے کئی اوپری ہاتھ بلکہ پوری مافیا موجود ہے جس کی ایما پر غلط اور زائد بلنگ جیسے سنگین جرائم پنپ رہے ہیں۔ امید کی جانی چاہیے کہ مذکورہ شق کے مطابق کارروائی کرتے ہوئے صرف سامنے موجود عملہ ہی نہیں بلکہ درپردہ عناصر کو بھی کٹہرے میں لایا جائے گا۔ حکومت کی جانب سے 2018 کو لوڈشیڈنگ کے خاتمے کا سال قرار دیا جارہا ہے لیکن اس سے پہلے صائب ہوگا کہ بجلی محکمہ کی جانب سے جاری زیادتیوں کا ازالہ اور زائد و غلط بلنگ جیسے رجحانات کا خاتمہ کیا جائے۔



Source link