جمائی کیوں آتی ہے؟


 جمائی کیوں آتی ہے، اس بارے تا حال حتمی معلوماتInfo دستیاب نہیں ہیں البتہ اتنا علم ضرورہے کہ جمائی ناصرف تھکن کی علامت بلکہ زیادہ عامیانہ صورتCondition میں جسمانی حالت کی تبدیلی کی بھی علامت ہے۔اس بارے میں مشاہدات و مطالعاتStudy سے یہ بات سامنے آتی ہے کہ ہم اس وقت جمائی لیتے ہیں جب طبیعت بوجھل ہوتی ہے یا تھکن غالبMighty ہو تی ہے۔ اس کے علاوہ جمائی اس وقت بھی آتی ہے جب ہم جاگ رہے ہوتے ہیں اور بعض اوقات Some Timesجب جسمانی قوت میں کمی  واقع ہو جاتی ہے۔
ماہرینExperts کے مطابق یہ متعدی صورت کی حامل ہو تی ہے۔بعض اوقات یوں ہوتا ہے کہ ہم کسی ایسے شخصPerson کو دیکھ رہے ہوتے ہیں جو جمائی لے رہا ہوتا ہے اور دیکھتے ہی دیکھتے بے اختیار ہم بھی جمائی لینے لگتے ہیں۔جمائی کے بارے میں سوچناThinking،سننا یادیکھنا بھی اس کی تحریک کا باعث بن سکتا ہے۔ سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ ایسا کیوں ہے؟ جمائی آنے کے بارے میں سالہا سال سے مختلفDifferent نظریات سامنے آتے رہے ہیں۔ کئی شواہد سے یہ ثبوت Evidenceملتا ہے کہ جمائی جسم کی اندرونی حالت یا ماحول کی تبدیلی کا دوسروں سے مواصلات کا ذریعہResource ہے۔

اگر ایسا ہے تو اس کی متعدی صورت دراصل جانوروںAnimals کے کسی گروپ کے درمیان مواصلات یا کمیونیکشن کا ذریعہ ہو گی۔ ممکنہ طور پر اس کا مطلب بیک وقتTime ایک جیسے طرزعمل کا اظہار ہوسکتا ہے۔ اگر یہ درست ہے تو جمائی بہت حد تک ماضیPast کا ایک نقش یا ارتقائی ذریعہ مواصلات ہو گا۔دور حاضر میں جب انسان اشاروں کی زبان Languageسے ترقی کرکے الفاظ کے ذریعے اظہار کو مکمل طور پر اپناچکا ہے جمائی ’’ذریعہ اظہار کے طور پر‘‘ انسانHuman کیلئے اہمیت تقریبا ختم ہو چکی ہے۔
جمائی ایک ہم وقت اضطراری عمل ہے جس میں ایک گہری سانس Deep Breathلی جاتی ہے اس دوران منہ کھلتا ہے اور جبڑوں کے پٹھوں اور اُس کناروں Cornersپر کھنچاؤ پڑتا ہے۔ یہ عمل کئی دوسرے جانداروں میں بھی وقوع پذیر ہوتاہے۔ انسانوں میں تو یہ عمل Processعموما دیکھنے کو مل جاتا ہے۔ اِس میں دماغ کے لاشعور اور جسم کے درمیان ایک رابطہContact کاری نظر آتی ہے لیکن اس کا آلہَ کار نظر نہیں آتا۔ جہاں تک جمائی آنے کے سبب کا تعلقRelation ہے، سالہا سال تک یہ خیال کیا جاتا رہا کہ جمائی دراصل جسم میں اضافی آکسیجنOxygen پہنچانے میں مدددیتی ہے کیونکہ جمائی تب آتی ہے جب پھیپھڑوں میں آکسیجن کی مقدار کم ہوچکی ہوتی ہے۔ اگرچہ اب یہ بات معلوم Infoہوچکی ہے کہ آکسیجن کی مقدار کو چیک کرنا پھیپھڑوں کاکام نہیں ہے۔ مزید برآں ہسٹریا Hysteriaکے دوران آنے والی عمومی مگربے تسکین جمائی لینے کے وقت ابھی پھیپھڑوں میں ہوا Airنہیں پہنچی ہوتی کہ جمائی آجاتی ہے۔ سانس لینے اور جمائی لینے کے عمل دماغ Brainکے مختلف حصوں سے کنٹرول ہوتے ہیں۔
PVN یعنی "Paraventricular Nucleus"جو دماغ کے  تیسرے وینٹریکل کے با لا ئی حصے میں ہوتاہے، جمائی کی ترغیب دے سکتا ہے۔ یہ مفروضہ کہ جمائی ہم تب لیتے ہیں جب ہم تھک Fatiqueیا   اُکتا چکے ہوتے ہیں بھی یہاں غلط ثابت Proveہوتا ہے کیونکہ "PVN"جنسی جذبے کی افزائش میں بھر پور کردار ادا کرتا ہے اور غالباََ            اُکتاہٹ سے اُس کا دورTradition کا واسطہ بھی نہیں ہے۔ یہ با ت قرین قیاس لگتی ہے کہ ہائپوتھیلمس یا دماغ کا تیسرا جوف یا وینٹریکل کئی دوسرےOthers عوامل کے ہمراہ جمائی کے احکامات کیلئے مرکزی حکم بھجوانے کا باعث ہوتاہے۔ یہاں پر کئی کیمیائی پیغامMessage رساں ہوتے ہیں جن میں "Oxytocin" ,"Glycine" ,"Dopamine" "Adrenocorticotropic Hormone" or ACTH"وغیرہ شامل ہیں۔ "ATCH"رات کے وقت سونے سے پہلے تا صبح Morningجاگنے سے پہلے تک دماغی تحریک کے تحت خارج ہوتے ہیں۔ انہی کے نتیجے میں انسانی جسم Human Bodyمیں جمائی اور اینٹھن یا کھچاؤکا طرزِ عمل پیدا ہوتا ہے۔ "PVN"میں کچھ مخصوص نیورانوں کے تحت نائٹرک آکسائیڈ کی پیداوار کی بھی ضرورت پڑتی ہے جس کی جمائی کے عمل کیلئے ضرورت ہوتی ہے۔ ایک بار جب "PVN" کے خلیات میں تحریک پیدا ہوتی ہے تو دماغ کے "Stem"اور"Hippocampus" خلیوں کو متحر ک کر دیتے ہیں جو جمائی کا سبب بنتے ہیں۔
 اِس صورت میں جمائی کا آنا ضروری Importantہوتا ہے کیونکہ اگراس وقت آپ جمائی کو روک دیں تو عمل بے تسکینی کا باعث ہوسکتا ہے۔ اِس سے بات سامنے آتی ہے کہ جمائی کے عملProcess میں جبڑوں کا کھلنا اور چہروں کے پٹھوں کا کھنچاؤ تسکین کیلئے ضروریImportant ہے۔ یہ بھی ممکن ہے کہ جمائی کے عمل میں دماغ کے مزید کئی حصے بھی متحرک ہوتے ہوں یااُن کا کوئی اہم کردار Roleہو۔ یہ بات بھی دلچسپی سے خالی نہیں ہے کہ جب جمائی ایک عمومی فعل سمجھی جاتی ہے تو یہ ایسے مریضوں Patientمیں کچھ زیادہ تعداد میں کیوں مشاہدہ کی جاسکتی ہیں جودماغی چوٹ ، صدمے یا دماغBrain اور حرام مغز کے بعض حصوں کے سخت ہو جانے کی بیماری میں مبتلا ہوتے ہیں۔ سُنت کے مطابق جمائی لیتے وقتTime منہ کے آگے ہاتھ رکھنا چاہیے تاکہ ہوا کی زیادہ مقدار اندر جانے سے پھیپھڑوں کو نقصانLose نہ پہنچ جائے۔مزید تحقیقات کے نتیجے میں ممکن ہے کہ مزید بہتر طریقےMethod سے اِس عمل کو سمجھنا ممکن ہوسکے۔
Loading...
جمائی کیوں آتی ہے؟ جمائی کیوں آتی ہے؟ Reviewed by Mirza Ehtsham on March 10, 2019 Rating: 5

No comments:

Facebook

Powered by Blogger.